سلام آباد ( )صدر آزاد جموں و کشمیر سردار مسعود خان نے کہا ہے کہ مقبوضہ جموں و کشمیر میں بھارت کی فرعونیت وچنگیز یت اور وہاں

سلام آباد ( )صدر آزاد جموں و کشمیر سردار مسعود خان نے کہا ہے کہ مقبوضہ جموں و کشمیر میں بھارت کی فرعونیت وچنگیز یت اور وہاں دہرائی جانے والی ظلم کی داستان نا صرف عالمی قوانین کی خلاف ورزی ہے بلکہ خود بھارت کے آئین میں انسانی حقوق کے تحفظ کے لیے بنائے گئے قوانین کی بھی نفی ہے ۔ مقبوضہ وادی میں بچوں ، بوڑھوں ، خواتین اور نوجوانوں پر ظلم و بربریت کے واقعات برادشت کی تمام حدوں سے تجاوز کر چکے ہیں ۔ بھارت مقبوضہ کشمیر میں عوام کے دل و دماغ جیتنے کی جنگ ہا ر چکا ہے اور اب وہ محض فوجی طاقت کے بل بوتے پر کشمیر پر اپنا قبضہ جمائے ہوئے ہے جو زیادہ عرصہ قائم نہیں رہ سکتا ۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے اسلام آباد میں پاکستان ہاؤس کے زیر اہتمام کشمیر میں انسانی حقوق کے بارے میں اقوام متحدہ کی رپورٹ ، مقبوضہ کشمیر میں آبادی کے تناسب کو تبدیل کرنے کی کوششیں اور اس کی سماجی اثرات کے عنوان سے سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ سیمینا ر میں مقبوضہ کشمیر کی مشترکہ مذاحمتی تحریک کے رہنما سید علی گیلانی کا ایک اہم پیغام بھی پڑھ کر سنایا گیا ۔ جبکہ سیمینار سے لندن میں قائم جموں و کشمیر انسانی حقوق کونسل کے سربراہ ڈاکٹر نذید گیلانی ، انسانی حقوق کی عالمی چمپیئن اور ناولسٹ جین ٹیلر ، سید علی گیلانی کے پاکستان میں نمائندہ عبداللہ گیلانی اور پاکستان ہاؤس کے ڈائریکٹر جنرل رانا اطہر نے بھی خطاب کیا ۔ اپنے خطاب میں صدر آزاد کشمیر سردار مسعود خان نے کہا کہ اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کمیشن کی مقبوضہ جموں و کشمیر میں بھارت کے مظالم اور انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کے بارے میں رپورٹ محض ایک ابتداء اور وہاں ہونے والے واقعات کی ایک معمولی جھلک ہے ۔ حقیقت یہ ہے کہ بھارت مقبوضہ علاقے میں ایسے مظالم کر رہا ہے جس کی نظیر پوری انسانی تاریخ میں نہیں ملتی۔ انہوں نے نیو یارک ٹائمز اور دوسرے عالمی اخبارات و جرائد میں چھپنے والی رپورٹس کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ بھارتی ا فواج مقبوضہ جموں وکشمیر میں معصوم شیر خوار بچوں کو بھی اپنے انتقام کا نشانہ بنا رہی ہیں۔ جس کی مثال 18 ماہ کی بچی حنا نثار ہے جسے بھارتی فوج نے پیلٹ گن سے فائرنگ کر کے اس وقت زخمی کر دیا جب وہ اپنی ماں کی گود میں تھی ۔ صدر سردار مسعود خان نے کہا کہ بھارت کشمیریوں کو ظلم و جبر کا نشانہ بنا کر انہیں غلامی کی زندگی قبول کرنے پر مجبور کر رہا ہے ۔ جسے کشمیر ی کسی صورت قبول کرنے کے لیے تیار نہیں۔ انہوں نے کہا کہ بھارت مقبوضہ علاقے میں عورتوں ، بچوں اور نہتے لوگوں پر گولیاں چلا کر جنیوا کنونشن اور دوسرے عالمی قوانین کی د ھجیاں بکھیر رہا ہے جس کا بین الاقوامی برادرای کو نوٹس لینا چاہے ۔ اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کمیشن کی رپورٹ نے مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کے ہاتھوں ظلم و ستم کو بے نقاب کر کے اس تاثر کو ختم کر دیا کہ بھارت کی عالمی سطح پر مذمت نہیں کی جا سکتی ۔ انہوں نے اقوام متحدہ کی رپورٹ اہم نکات پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ اس رپورٹ میں واضح طور پر کہا گیا ہے کہ بھارت کشمیریوں کے حق خود ارادیت کا احترام کرئے جسے بین الاقوامی قانون کا تحفظ حاصل ہے اور وادی میں قابض فوج کی غیر قانونی کاررائیوں کو تحفظ دینے والے قوانین منسوخ کرے ۔ اس رپورٹ میں اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کونسل سے بھی مطالبہ کیا گیا ہے کہ وہ کشمیر میں حقوق انسانی کی صورتحال کا جائزہ لینے کے لیے ایک کمیشن آ ف انکوائری مقررکرے جو مقبوضہ جموں و کشمیر کا دورہ کر کے وہاں کی صورتحال کا جائزہ لے اور اپنی رپورٹ پیش کرے ۔ صدر سردار مسعود خان نے کہا کہ اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کمیشن کی رپورٹ کے بعد برطانیہ کی پارلیمنٹ میں قائم کل جماعتی پارلیمانی کشمیرگروپ کی رپورٹ بھی عالمی سطح پر کشمیر کے حوالے سے ایک اہم پیشرفت ہے ۔ برطانوی رپورٹ میں دیگر باتوں کے علاوہ مقبوضہ جموں وکشمیر میں نا معلوم قبروں میں مد فن افراد کی شناخت کا مطالبہ بھی کیا گیا ہے جنہیں بھارتی فوج نے گرفتار کر کے ٹارچر سیلوں میں تشدد سے ہلاک کیا تھا ۔ سردار مسعود خان نے کہا کہ کل جماعتی پارلیمانی کشمیر گروپ کے سربراہ کریس لزلی اور دوسرے ممبران کا شکریہ ادا کیا جنہوں نے محنت اور جانفشانی سے یہ رپورٹ تیار کر کے بھارت کو بے نقاب کیا ۔ انہوں نے کہا کہ اقوام متحدہ برطانوی پارلیمنٹ کے علاوہ اسلامی تعاون تنظیم کے مستقل انسانی حقوق کمیشن کی رپورٹ بھی بہت اہمیت کی حامل ہے جس میں بھارت پر انسانیت کے خلاف جرائم کرنے پر معاشی پابندیاں لگانے کا مطالبہ کیا گیا ہے ۔

Download as PDF