President AJK Barrister Sultan Mehmood Chaudhry addressing a function organized by District Bar Association Kotli as a special guest.

.

کوٹلی( ) 14دسمبر2021ء

صدر آزاد جموں وکشمیر بیرسٹر سلطان محمود چوہدری نے کہا ہے کہ وکلاء مقبوضہ کشمیر میں جاری مظالم کے خلاف اور مسئلہ کشمیر کے حل کے لئے اپنی آواز بلند کرنے کے لئے اپنا بھرپور کردار ادا کریں۔ اسی طرح آزادکشمیر سے کرپشن اور تعصب کی سیاست کو ختم کرنے کے لئے ہمارا ساتھ دیں۔ آزادکشمیر آزادی کا بیس کیمپ ہے اور اگر ہم نے اسے صحیح معنوں میں آزادی کا بیس کیمپ بنانا ہے تو ہمیں دوبارہ اُسی طرح سے متحد ہونا ہو گا جیسے کہ 1947میں ہمارے آباؤ اجداد نے یہ خطہ اپنے زور بازو سے آزاد کرایا تھا۔ بیرون ملک ہمارا ڈائسپورہ کرونا کی صورتحال کے باعث دو سال سے غیر متحرک تھا میں نے جب صدر ریاست کے عہدے کا حلف اُٹھایا تھا تو میں نے کہا تھا کہ آزادکشمیر آزادی کا بیس کیمپ ہے اور ہمیں یہاں سے مسئلہ کشمیر کو عالمی سطح پر جارحانہ انداز میں اُٹھانا ہے۔ اس سلسلے میں، میں نے صدر کے عہدے کا حلف اُٹھاتے ہی ستمبر میں امریکہ اور اکتوبر میں برطانیہ اور یورپ کا دورہ کیا جس سے عالمی سطح پر ہمیں بڑی حمایت حاصل ہوئی۔ مسئلہ کشمیر اب فیصلہ کن مرحلے میں داخل ہو چکا ہے۔ لہذا ہمیں ہر فورم پر مسئلہ کشمیر کو جارحانہ انداز میں اُٹھانا ہو گا۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے آج یہاں کوٹلی میں ڈسٹر کٹ بار ایسوسی ایشن کوٹلی کے زیر اہتمام تقریب سے بطور مہمان خصوصی خطاب کرتے ہوئے کیا۔ تقریب کی صدارت چوہدری محمد رفیق شاہین صدر ڈسٹرکٹ بار ایسوسی ایشن کوٹلی نے کی جبکہ اس موقع پر ڈسٹرکٹ بار ایسویسی ایشن کوٹلی کے سیکرٹری جنرل سردار محمد سہیم رفیق نے بھی خطاب کیا۔ اس موقع پر اپنے خطاب میں چوہدری محمد رفیق شاہین صدر ڈسٹرکٹ بار ایسوسی ایشن کوٹلی نے وکلاء کو درپیش مسائل پیش کیے جبکہ اس موقع پر انہوں نے صدر ریاست آزاد جموں وکشمیر بیرسٹر سلطان محمود چوہدری کی آزادکشمیر میں رواداری کی سیاست کو فروغ دینے اور مسئلہ کشمیر کو عالمی سطح پر اُجاگر کرنے کی کوششوں کو سراہا۔ اس موقع پر تقریب سے اپنے خطاب صدر ریاست آزاد جموں وکشمیر بیرسٹر سلطان محمود چوہدری نے مزید کہا کہ وکلاء معاشرے کا اہم ستون ہیں اور عوام کو انصاف کی فراہمی کے لئے اپنا اہم کردار ادا کرتے ہیں اب جبکہ مسئلہ کشمیر فیصلہ کن موڑ میں داخل ہو چکا ہے تو وکلاء مسئلہ کشمیر کو اُجاگر کرنے کے لئے اپنا رول ادا کریں۔ میں نے اپنے بیرون ملک دوروں میں کشمیری عوام کا موقف انٹرنیشنل کمیونٹی کے سامنے رکھا۔ عالمی برادری اب مسئلہ کشمیر کو سمجھ چکی ہے اور اس کا حل چاہتی ہے۔ جبکہ بھارت نے 05اگست2019کے بعد مقبوضہ کشمیر میں کشمیریوں پر مظالم کی انتہاء کر دی ہے اور اپنی روایتی ہٹ دھرمی پر قائم ہے۔ لہذا اب ہمیں اس سلسلے میں عالمی سطح پر مسئلہ کشمیر کو اُجاگر کرنے کے لئے اپنی کوششیں مزید تیز کرنی ہونگی۔ہائیکورٹ آف آزاد جموں وکشمیر میں ججز کی تعینانی کا مرحلہ جلد مکمل کر لیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ آزادکشمیر سے کرپشن اور تعصب کی سیاست کے خاتمے کے لئے اقدامات اُٹھا رہے ہیں۔
٭٭٭٭٭

Download as PDF